Please login or register for features like No Ads.

Author Topic: چدوانے کے چکر میں  (Read 144894 times)

Offline hothoney

  • T. Members
  • 1 stars
  • *
  • Posts: 38
  • Gender: Female
  • like lesbian sex
    • View Profile
چدوانے کے چکر میں
« on: March 12, 2012, 01:10:30 AM »
چدوانے کے چکر میں


عمر کے ساتھ ساتھ ہم سب کی جرورتے بھی بدلتی رہتی ہیں اور لالسا بھی. مے ان ابھی اسی سال بارهوي کلاس میں آئی ہوں اور میرے شارير کے ساتھ ہو رہے تبدیلیوں کے ساتھ ہی میرے دل میں بھی جنس کو لے کر عجیب و غریب انداز آتے جاتے رہتے ہیں.

اب میں آپ کو اپنی آپ - بیتی بتانے جا رہی ہوں اور یہ بھی کہ کچھ پانے کا لالچ کیا - کیا گل كھلو سکتا ہے، کام واسنا کہاں سے کہاں تک لے جا سکتی ہے اور کچھ حاصل کرنے کے چکر میں کیا کیا نہیں دینا پڑ سکتا ہے . یہ بات تب کی ہے جب میں 12 وی کلاس میں تھی. ہمارے گھر کے ٹھیک سامنے والے مکان میں ایک خاندان میں دو خوبصورت لڑکے رہتے تھے، دونوں ہی دیکھنے میں کسی فلم اداکار سے کم نہ تھے اور نہ ہی ادھر ادھر کی باتوں سے انہیں کوئی لینا دینا تھا، بس اپنے کام سے کام اور ان کی یہی بات مجھے سب سے اچھی لگتی تھی. محلے کی تمام لڈكيا انہیں پٹانا چاہتیں تھیں کیونکہ انمے کچھ الگ ہی بات تھی. میں بھی ان لڑکیوں میں سے ایک تھی اور ان کے بارے میں سوچ کر کر ہی میری چوت کے ریشمی بال کسی گیلے ہو جایا کرتے تھے. ان کے لںڈ کی چاہت میں مے اندر اندر گھلی جا رہی تھی اور رات دن بس ایک بار انمے سے کم سے کم کسی ایک ایک لںڈ ہاتھ میں لیکر، اسے منہ میں لیکر چوسنے کا، ان سے چدوانے کا تصور کیا کرتی تھی، پر کوئی موقع ہی نہیں مل رہا تھا بات کرنے کا، انہیں اپنی مرضی بتانے کا.

قسمت ہمیشہ ایک سی نہیں ہوتی، جب مہربان ہوتی ہے تو بن بتائے ہی سب کچھ دے دیتی ہے. آج میری قسمت بھی میرے ساتھ تھی، کم سے کم مجھے تو یہی لگ رہا تھا پر قسمت کو کچھ اور ہی منظور تھا اور جو قسمت کو منظور ہو اس میرا، میری چوت کا تو کوئی بس چل نہیں سکتا سو چلا بھی نہیں. ہر روز کی طرح اس دن بھی میں جب اپنی چھت پر گھوم رہی تھی اور انمے سے ایک اپنی چھت پر، میں ٹکٹکی لگائے ایک ٹك اس کو دیکھ رہا تھا تو ایک دم اس نے مجھے دیکھا اور میں مسکرانے لگی اور وہ بھی پرتتتر میں مجھے دیکھ کر مسكرايے بغیر نہ رہ سکا. مے سمجھ گئی کی یہاں میری دال گل سکتی ہے اور میری تمنا پوری ہو سکتی ہے. مجھے رہ رہ کر اپنے شارير میں سرہن سی محسوس ہونے لگی، میرے انگ انگ سے آگ برسنے لگی، چچیوں سخت ہونے لگیں، چوت کی بیرونی پكريو میں ہلچل ہونے لگی، اور دماغ میں اس کے لنڈ کا خیال گھومنے لگا، نہ جانے وہ مانےگا بھی کی نہیں، کتنا بڑا اور موٹا ہے اس خوبصورت سے نظر آنے والے لڑکے کا لنڈ، کیا اسی کی طرح اس کا لنڈ بھی هٹٹا کٹا اور رسيلا ہے، اور ایسے نہ جانے کتنے خیال ایک ایک کر کے آنے جانے لگے. وہ بھی کبھی مجھے دیکھ رہا تھا اور کبھی دھیرے سے اپنے لںڈ کو ٹٹول رہا تھا، لگتا تھا اس کے دماغ میں بھی میری چوت کو لے کر، میرے ابھاروں اور چچو کو لے کر اتھل پتھل ہو رہی تھی.
اس سے اچھا موقع اور کیا ہو سکتا تھا، میں نے اپنے دل کے بھاوو کو چھپاتے ہوئے اس کی طرف پتھر میں لپیٹ کر ایک کاغذ کا ٹکڑا بھیجا جس میں لکھا تھا "میں ان، تم مجھے بڑے اچھے لگتے ہو، مجھ سے دوستی کروگے؟ شاید میری پہل کا ہی انجار کر رہا تھا، اس نے بھی جھٹ سے جواب دیا، میں منو، تم بھی مجھے بہت اچھی لگتی ہو پر کبھی کہنے کی ہمت نہیں ہوئی، تم سے دوستی کر کے میں اپنے کو مبارک سمجھوگا. دھیرے - دھیرے ہم ایک دوسرے سے محبت - خطوط سے بات کرنے لگے کیونکہ ان دنوں بات کرنے کا اور کوئی اچھا ذریعہ نہیں تھا. اب تو ہر روز ہی ہم لوگ چھت پر ملنے لگے اور بس ایک دوسرے کو حسرت بھری آنکھوں سے دیکھتے رہتے اور دل ہی دل اس دن کا تصور کرتے رہتے جس دن ہم ایک دوسرے کی بانہوں میں سماں پائیں گے، میں اس کے لنڈ کو دھیرے دھیرے سہلا ہوئے اپنے منہ میں بھر لگي اور وہ میری بھر کے کالے کالے بالوں کے درمیان میں سے اپنے ہوٹوں اور اپنی زبان سے میری چوت کے دروازے پر دستک دے گا.

آخر وہ دن آ ہی گیا .... انتظار ختم ہوا، دل میں خوشی بھی تھی اور ڈر بھی، چدوانا بھی چاہتی تھی اور پرےگنٹ ہونے کا ڈر بھی ستا رہا تھا. جیتنا تو چدنے چودنے کے کھیل نے ہی تھا، سو پرےگنٹ ہونے کا ڈر جاتا رہا اور میں سجدھج کے، اپنے بھر کے ریشمی بالوں کو saaf کرکے رات کا انتظار کرنے لگی. ہآ یوں کی ایک دن اس نے مجھے رات کو ملنے کے بارے میں پوچھا. میں نے فورا اس سے اس رات اس کے گھر آنے کی بات لکھ کر چٹھٹھي اس کے دروازے پر پھینک دی، وہ چٹھٹھي پڑكر پھلا نہیں سماں رہا تھا اور میں، میں تو دل ہی دل کسی مورني ایک طرح ناچ رہی تھی، گویا زندگی کی سب سے بڑی خوشی مل گئی ہو، کسی نے كبےر کا كھذانا دے دیا ہو، اس کے لنڈ کی گرمی کو محسوس کرنا، اس کو چومنا چاٹنا، اپنی چوت پر اس کے لںڈ کو رگڑنا کا خیال کسی كبےر کے خزانے سے کم بھی تو نہیں تھا.

اس دن تو اس کا لؤڑا بھی الگ ہی تیور میں دکھا رہا ہوگا. تنتانايا ہوا کھمبے کی طرح کھڑا اس کے پجامے سے بار بار بہار آ رہا ہوگا، میری گلابی چوت کے درشن کرنے، میرے منہ میں سماں جانے کے لئے اور میری ابھری ہوئی مست گاںڈ میں دھكاپےل کرنے کے لئے. تبھی تو وہ بار بار چھت پر آ جا رہا تھا. مے اسکی منودشا دیکھ کر بہت خوش تھی اور بار بار اپنی برا کے اندر سے ہاتھ لےجاكر اپنی چچو کو مسل رہی تھی، اس دن کی رات بھی کتنی بےرهم تھی، ہونے کو ہی نہیں آ رہی تھی ....

خوشی - خوشی میں میں نے رات کو کھانا بھی نہیں کھایا. دھیرے - دھیرے رات کے بارہ بج گئے. میں رجاي سے نکل کر ان کے گھر کے برابر والی دیوار سے ان کی چھت پر پہنچ گئی. ان کی چھت پر ایک کمرہ تھا جس میں وہ پڑھا کرتا تھا. اسی کمرے میں ملنے کے بارے میں میں نے چٹھٹھي میں لکھا تھا. جیسے ہی میں نے دروازہ كھٹكھٹانا چاہا تو دروازہ پہلے سے ہی کھلا تھا. اس وقت میری كھشيا ساتویں آسمان پر تھا. کمرے میں کافی اندھیرا تھا، میں دھیرے - دھیرے اس کا نام پکارتے ہوئے اس کے بیڈ پر پہنچ گئی جس پر کی رجاي میں کوئی سویا ہوا تھا تب مجھے لگا کہ وہ شاید شرما رہا ہے اور سونے کا ڈرامہ کر رہی ہے. ہم دونوں کا یہ پہلا ہی انبھو تھا، پر مجھے شرم سے مزید چدنے کا جوش تھا اور اسے شرم کے ساتھ ساتھ چودنے کا. میں اس کے برابر میں جا کر لیٹ گئی اور دھیرے دھیرے اس کے گالوں کو سہلانے لگی. اب اس کی شرم بھی پھ کر کے اڑ گئی اور اس کا ہاتھ میرے مومو پر آ گرا. وہ انہیں بے صبری سے مسلنے لگا، اسکا لںڈ میری جھگو سے ٹکرا ٹکرا کر واپس لوٹ جاتا گویا التجا کر رہا ہو مجھے اپنی ٹاںگو کے درمیان میں سماں لو.
اس نے دوسرے ہاتھ سے دھیرے دھیرے میری گاںڈ کو سہلانا شرو کر دیا، میں لطف اور مستی میں پاگل ہوئے جا رہی تھی، میرا ہاتھ اسکے لںڈ کو ٹٹول رہا تھا، پجامے کے اندر ایک دم پھكارتے سانپ کی طرح، مجھ سے برداشت نہیں ہو رہا تھا، مے تو ہاتھ میں لے کر اس کے لنڈ سے کھلواڑ کرنا چاہتی تھی، اسے کسی عام کے طرح چوس چوس کر اس کا سارا رس پی جانا چاہتی تھی سو بغیر وقت گواے میں نے پجامے کا ناڑا کھول دیا، اور اسمے سے بہار جھاكتے تنتانتے لںڈ کو اپنی مٹھی میں زور سے بھيچ لیا، اس نے ایک بار تو اف ایک مگر پھر میری چچیوں اور گاںڈ کو سہلانے پچكارنے میں لگ گیا. مے اٹھی رجاي اٹھائی اور گپ سے اسکا لںڈ نگل گئی، اس کی چیخ نکل گئی، پر مجھ سے انتظار ہی نہیں ہو رہا تھا، سو میں نے تو اپنے دانتوں سے زور سے اس کا لوڈا کاٹ لیا، وہ درد میں ائی ما کر کے چلایا تو مجھے ہوش آیا اور میں نے دھیرے دھیرے اپنے ہوٹوں سے اس کو اوپر نیچے کرنا شروع کیا، اسے مجا آ رہا تھا اور اس کی پکڑ میری گاںڈ کے ابھاروں پر بدتي جا رہی تھی. پر میں تو اپنی ہی مستی میں اس کا بڑا سا لنڈ چوس چوس کر اپنی چوت کی آگ کو اور بھڑکانے میں لگی تھی.

اب اس کا لؤڑا اسے اور انتظار کرنے کی اجازت نہیں دے رہا تھا، وہ دھیرے سے اٹھا اور مجھے کںدھو سے پکڑ کر اوپر اٹھایا، میں نے سوچا اب وہ میری چوت کو چاٹےگا، اپنی زبان کو میری چوت کے اندر تک گھسا دے گا، اپنے لںڈ سے جھاگو کی دیواروں سے ٹکرا ٹکرا کر میرا بینڈ بجا دے گا، پر جب اس نے ایسا کچھ نہیں کیا تو میرا نشہ اترنے لگا، میں tadafne لگی اور اپنے ہی انگلو کو چوت پر لےجاكر اس کو سہلانے لگی. مجھے سمجھ نہیں آ رہا تھا اس کا برتاؤ، میں نے سوچا شاید وہ نروس ہو گا، میں نے اس کا ہاتھ پکڑا اور اپنی چوت کے پاس لے گئی، اس کی ایک اوںگلی اپنی پھددي میں دال دی سوچ وہ excited ہو کر اپنا لںڈ میری بھر میں دال دے گا ... پر اس نے ایسا نہیں کیا، وہ تو اور زور زور سے میری گاںڈ کو دبانے لگا، اس چھید میں اپنی اوںگلی ڈالنے لگا، میری درد سے چیخ نکل گئی، میں سمجھ گئی اس کو میری چوت میں نہیں میری گاںڈ میں زیادہ دلچسپی ہے. میرا کام کا بھكھار اتارنے لگا، چدوانے کی ساری تصور پر پانی پھر گیا، پر مجبوری تھی، میرے پاس اور کوئی چارہ بھی نہیں تھا سو میں نے کوئی مخالفت نہيں کی اور جو وہ کہتا گیا وہ کرتی گئی، جو کرتا گیا گیا وہ برداشت کرتی رہی .

اس نے دھیرے دھیرے مجھے ننگا کر دیا اور بستر پر الٹا لٹا دیا. اس وقت میں سوچ رہا تھا کہ جو بھی ہونا ہے، اب جلدی ہو جائے! میرا دل مایوس ہو رہا تھا، مجھے صرف گاںڈ مروانے میں کوئی دلچسپی نہیں تھی ... میں تو چدنا چاہتی تھی پھر بھلے ہی وہ میری گاںڈ ہلاک یا اپنی مٹھ ..... سو مے چپ چاپ اپنی چوت کو اپنے ہی ہاتھوں سے دبایے الٹا لیٹی رہی. وہ بھوکے کتے کی طرح میری گاںڈ پر ٹوٹ پڑا، درد کے مارے میری چیخ نکل گئی. پر وہ کب رکنے والا تھا، جیسے جیسے میری چیخ کی آواز بدتي جاتی اس کے جھٹکے سے میری گاںڈ اور پھٹتي جاتی، اس نے دونوں ہاتھوں سے مجھے کمر سے پکڑ رکھا تھا اور زور زور سے گاںڈ میں اپنے لںڈ کو اندر بہار کر رہا تھا، گویا کسی لڑکی کی نہیں کسی کتیا کی گاںڈ مار رہا ہو. میں نے سنا تھا کہ جب لڑکی کے ساتھ پہلی بار سیکس کرتے ہیں تو ان کی چوت سے خون نکلتا ہے، آج میری گاںڈ کہ حالت کچھ ایسی ہی تھی. میری گاںڈ سے خون بہہ رہا تھا لیکن وہ خون کی پرواہ نہ کرتے ہوئے دھکے مارتا ہی رہا. اسکا لںڈ جلدی سے جھڑنے کا نام نہیں لے رہا تھا کیونکہ ابھی وہ جوان تھا، پہلی بار کسی کی گاںڈ میں مر رہا تھا. تقریبا بیس منٹ بعد اسکا لںڈ سے پچکاری جیسے پانی نکلا اور وہ نڈھال ہو کر میری گاںڈ کے اوپر ہی سو گیا. مے کچھ دیر انتظار کرتی رہی اور پھر اسے برابر میں دھکیل دیا. انمنے من سے اپنے کپڑے پہنے، اور چپ چاپ اپنی چوت کا پانی چوت میں ہی اپنے گھر لوٹ آئی.
اس دن کے بعد میں نے من ہی من سوچ لیا اب کبھی کسی مرد سے چدوانے کا خیال بھی اپنے دل میں نہیں آنے دوں گی، پر دل تو دل ہے کب پھسل جائے کوئی نہیں جانتا. اس بار جو میرا من پھسلا تو بس ایسے کی اجتك بھی اس کے بھائی کے ساتھ اٹکا ہوا ہے، کیا چودتا ہے .... اپھپھپھ توباا ..... پھر کبھی بتاگي .....

مجھے ضرور بتانا آپ کو یہ کہانی کیسی لگی.
Agar koi lasbian Girl ha to maray sa friendship kro ma b lasbian ho
Email & Yahoo id :  hooothoney@yahoo.com


Offline hearttheaf80

  • T. Members
  • 4 Stars
  • ****
  • Posts: 633
  • Gender: Male
  • be rukhiyan te saday naal
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #1 on: March 13, 2012, 03:45:47 PM »
kahani to theek thi magar parhney ma maza nahi aya,
totay phootay alfaz

f
Dil ka Rishta

Offline nipple_kisser

  • Looking a mature or young in KSA
  • Newbie
  • Posts: 7
  • Gender: Male
  • I LOVE NIPPLE SUCKING
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #2 on: March 13, 2012, 06:10:35 PM »
 :no: itna maza nahi aaya.....  :no:

Offline sameibad

  • T. Members
  • 2 Star
  • **
  • Posts: 49
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #3 on: March 21, 2012, 06:37:43 PM »
hahahahahahahahhahha

Offline malik77755

  • I like sexy stories. I want friendship if any
  • Newbie
  • Posts: 3
  • Gender: Male
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #4 on: March 25, 2012, 03:49:25 AM »
bus achi ha

Offline areu4me

  • ~♥INCEST Fantasy♥~
  • T. Members
  • 5 Stars
  • *****
  • Posts: 1562
  • Gender: Male
  • ~♥'I aM cRaZy fOr yOur lOve' LeT mE BuRn In lOve♥~
    • View Profile
    • areu4me » Show » Topics
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #5 on: March 25, 2012, 05:39:41 AM »
kamaal lihkti ho aap...keep it up
Anjaan rasta (by zaibi)
pachtawa@INCEST...slow and very long $tory!
HAWAS KI AAG (A True Incest Story)

Offline allfanse

  • 03344747142 ufone
  • Newbie
  • Posts: 3
  • Gender: Male
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #6 on: March 25, 2012, 12:25:49 PM »
its shows that you have not a reall sex experince..............all this is imagination

Offline Imran_Pia

  • T. Members
  • 5 Stars
  • *****
  • Posts: 3549
  • Gender: Male
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #7 on: March 26, 2012, 08:43:33 PM »
bus achi ha
malik sab ap or yahan?!
Apko daikh k hairt hoyi.
Hunn Araam aei???

Offline ArslanButt

  • T. Members
  • 5 Stars
  • *****
  • Posts: 1182
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #8 on: March 27, 2012, 12:08:46 PM »
guzara hai kahani

Offline ali-pasha

  • a.pasha
  • T. Members
  • 3 Stars
  • ***
  • Posts: 318
  • Gender: Male
  • black magic
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #9 on: August 12, 2012, 08:30:12 PM »
fazooooooooooooooooooooooooooooolllllllllllllllllllllll>>>>>>>>>>>>>>>>>>>>>>> dost

Offline Pakisoul

  • T. Members
  • 2 Star
  • **
  • Posts: 63
  • Gender: Male
  • she did'nt said Ever.......
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #10 on: August 20, 2012, 10:59:14 AM »
 :dots: :dots: :dots: :dots:.....................................
Likhna tha tere baghair bhi khush hain boht.....
Ansoo magar Qalam say pahlay he gir gaye......

Offline amiroops

  • Newbie
  • Posts: 1
    • View Profile
Re: چدوانے کے چکر میں
« Reply #11 on: August 22, 2012, 08:39:05 PM »
kuch khaas nhi hy
normal hy